پولیس والے نے ٹھک ٹھک گولیاں چلائیں اور بڑے پاپا مر گئے

سرینگر : کشمیری بچےعیاد جہانگیر نے اپنے نانا کی موت کیلئے بھارتی نیم فوجی سینٹرل ریزرو پولیس فورس کو ذمہ دار ٹھہرایا ہے۔ایک ویڈیو وائرل ہو رہی ہے جس میں تین سالہ عیاد نے اپنے گھر میں موجود ایک رشتے دار خاتون کو بتایا کہ پولیس والے نے ٹھک ٹھک گولیاں چلائیں اور بڑے پاپا مر گئے۔عیاد اور مذکورہ خاتون کے درمیان ہونے والی بات چیت کی 20 سیکنڈ کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہو چکی ہے جو کہ بھارتی بربریت کا منہ بولتا ثبوت ہے۔

ننھے عیاد سے قبل ان کی والدہ اور ماموں نے بھی ویڈیو بیانات میں 65 سالہ شہری بشیر احمد خان کی موت کا ذمہ دار سی آر پی ایف کو ٹھہرایا۔کشمیر کے دارالحکومت سری نگر سے پچاس کلومیٹر دور شمالی ضلع بارہ مولا میں بدھ کی صبح سی آر پی ایف کے اہلکاروں اور مبینہ عسکریت پسندوں کے درمیان فائرنگ کے تبادلے میں بشیر کی موت واقع ہوئی جبکہ ان کا تین سالہ نواسہ معجزاتی طور پر بچ گیا۔

ضرور پڑھیں   خورشید شاہ کے لئے ایک اور مشکل کھڑی ہو گئی، نیب نے ان کے گرد مزید شکنجہ کس دیا

اس حوالے سے مقامی صحافی کا کہنا ہے کہ جب ہم جائے وقوع پر پہنچے تو ہم نے ایک شخص کی خون میں لت پت لاش سڑک کے کنارے دیکھی اور ایک چھوٹے بچے کو اس کے سینے پر بیٹھے روتے بلکتے ہوئے دیکھا۔

۔۔واضح رہے کہ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فورسز کی درندگی کا ایک اور واقعہ سامنے آیا جس میں 60 سالہ بزرگ کو ان کے 3 سال کے نواسے کے سامنے قتل کر دیا گیا۔

ضرور پڑھیں   سربراہ جمعیت علمائے اسلام (س) مولانا سمیع الحق قاتلانہ حملے میں شہید

قابض بھارتی فورسز کی بربریت کا واقعہ سوپور میں پیش آیا ہے جہاں بزرگ کو کار سے اتار کر فائرنگ کر کے قتل کر دیا گیا۔نواسہ معجزانہ طور پر بھارتی فوجیوں کی فائرنگ سے محفوظ رہا، بچہ سہما ہوا نانا کی لاش پر بیٹھ کر روتا اور مدد کو پکارتا رہا۔60 سالہ شہید بشیر احمد خان کے بیٹے کا کہنا ہے کہ قابض فورسز نے اس کے والد کو کار سے اتار کر گولیاں ماریں۔شہید کے اہلِ خانہ کے مطابق بشیر احمد خان سامان لینے کا کہہ کر گھر سے سوپور جانے کے لیے نکلے تھے۔