ایاز صادق کے ابھینندن سے متعلق بیان کے بھارت میں چرچے

لاہور : پاکستان مسلم لیگ ن کے رہنما ایاز صادق گذشتہ روز بھارتی پائلٹ سے متلعق دئیے گئے بیان پر قائم ہیں۔تفصیلات کے مطابق گذشتہ روز مسلم لیگ ن کے رہنما ایاز صادق نے قومی اسمبلی میں تقریر کرتے ہوئے کہا تھا کہ ابھینندن کو بھارت واپس بھیجنے پر حکومت نے گھٹنے ٹیک دئیے۔شاہ محمود پسینے میں شرابور تھے اور ان کی ٹانگیں کانپ رہی تھیں۔

ایاز صادق نے کہا کہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ بھارت حملہ کر دے گا لہذا ابھینندن کو واپس جانے دیں۔اسی حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے لیگی رہنما نے کہا کہ بھارتی میڈیا نے میرے بیان کو توڑ مروڑ کر پیش کیا۔بھارتی میڈیا نے میرے بیان کو تبدیل کر کے چلایا۔ ایک چیز واضح ہے کہ ابھینندن مٹھائی باندھنے نہیں پاکستان پر حملہ کرنے آیا تھا،بھارتی جہاز کو گرانا پاکستان کی فتح تھی۔

ہمیں کہا گیا کہ پارلیمنٹیریز کی وزیراعظم کے ساتھ ملاقات ہے لیکن وزیر خارجہ آئے۔وزیراعظم نے اپوزیشن کا سامنا کیوں نہیں کیا وہ خود جانتے ہیں۔ ایاز صادق نے مزید کہا کہ ابھینند ن کو بھیجننے کی کوئی جلدی نہیں تھی زرا انتظار کر لیتے۔ابھینندن کو بھارت کے حوالے کرنے کا فیصلہ غلط تھا۔جب کہ وزیرخارجہ مخدوم شاہ محمودقریشی نے سابق اسپیکر قومی اسمبلی ایاز صادق کی جانب پارلیمنٹ میں دئیے گئے بیان پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ ایازصادق سے ایسی بات کی توقع نہیں کرتا،ایاز صادق نے جو مؤقف بیان کیا وہ حقیقت کے برعکس ہے۔

انہوںنے کہاکہ انٹیلی جنس معلومات پر پارلیمان کواعتماد میں لیاتھا،انٹیلی جنس معلومات میں ابھی نند ن کا ذکر نہیں تھا،سیاسی مقاصدکیلئے ایسی غیرذمہ دارانہ گفتگوکی جارہی ہے،ذمہ دار لوگ غیر ذمہ دارانہ گفتگو کررہے ہیں جس پر حیرانی ہے،اپوزیشن آئی سی جے کا فیصلہ پڑھ لے اور پاکستان کامؤقف بھی پڑھ لیا جائے ،یہ لوگ کلبھوشن کے معاملے پر بھی گمراہ کررہے ہیں،ابھی نند ن کے معاملے پر یہ قوم کو گمراہ کررہے ہیں،فیٹف میں پاکستان کو دھکیلنے والا کون تھا یہ نون لیگ کا دیا ہوا تحفہ ہے،بھارت کو ایسا موقع نہیں دینا چاہتے کہ وہ پاکستان کو دوبارہ آئی سی جے میں لے جائے۔