مزار قائدتوہین کیس:مریم نوازکی بھی گرفتاری کا امکان

کراچی : مزار قائد کی توہین کے کیس میں مسلم لیگ نون کی مرکزی نائب صدر مریم نوازکی گرفتاری کا بھی امکان ہے کراچی کے تھانہ بریگیڈ میں درج ایف آئی آرمیں مریم نوازاور کیپٹن صفدر کو نامزدکیا گیا ہے. اس مقدمے میں سابق وزیراعظم نوازشریف کے داماد کیپٹن ریٹائرڈ محمد صفدر کو آج صبح ہی کراچی پولیس نے گرفتار کرکے تھانہ بریگیڈ منتقل کیا ہے مقدمے میں دوسو کے قریب نامعلوم افراد ایف آئی آر نمبر591/20 کے مطابق مقدمہ مزراقائدکے پروٹیکشن اینڈ مینٹنس ایکٹ 1971کی دفعات6,8اور10 کی ذیلی شقوں اور تعزیرات پاکستان کی دفعہ34کے تحت درج کیا گیا ہے.

ایف آئی آر کے مدعی وقاص احمد خان ولد نفیس احمد خان جوکہ سعدی ٹاﺅن کراچی کے رہائشی ہیں نے اپنی درخواست میں کہا ہے کہ وہ اپنے دوستوں کے ساتھ اتوار کے روز فاتحہ خوانی کے لیے مزار قائد گئے تھے اسی دوران مریم نواز اپنے شوہرکیپٹن ریٹائرڈ محمد صفدر اور دوسو کے قریب نامعلوم افراد کے ساتھ وہاں پہنچے اورسیاسی نعرے اور ہلڑبازی شروع کردی درخواست دہندہ اور اس کے ساتھیوں کے روکنے پر کیپٹن صفدر نے انہیں جان سے مارنے کے دھمکیاں دیں.

درخواست گزار کا کہنا تھا کہ کیپٹن صفدر نے اپنے دوسو کے قریب نامعلوم ساتھیوں کے ہمراہ مزار قائد کا تقدس پامال کیا اور اسے نقصان پہنچانے کی کوشش کی لہذا ان کے خلاف مزراقائدکے پروٹیکشن اینڈ مینٹنس ایکٹ 1971کے تحت مقدمہ درج کیا جائے. واضح رہے کہ کراچی پولیس سندھ حکومت کے ماتحت ہے جہاں اپوزیشن جماعتوں کے اتحاد پی ڈی ایم میں شامل دوسری بڑی جماعت پاکستان پیپلزپارٹی برسراقتدار ہے ”اردوپوائنٹ “نے مقدمے کے مدعی وقاص احمد خان سے ایف آئی آر میں درج ان کے موبائل فون پر رابط کرنے کی کوشش کی مگر ان کا نمبر بند پایا گیا.