راولپنڈی میں لڑکی کو بے لباس کرکے ویڈیو بنانے کا معاملہ

راولپنڈی : راولپنڈی میں لڑکی کو بے لباس اور مبینہ زیادتی کیس میں نامزد ملزمان کو 14 روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کردیا گیا ہے۔راولپنڈی میں لڑکی کو بے لباس کرنے کے کیس سے متعلق کیس کی سماعت ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج مرزا شاید بیگ نے کی۔سماعت کے دوران ملزم ارسلان ,محسن اور عامر کو پیش کیا گیا یا۔مقدمہ میں نامزد تیسرا ملزم سبحان عدالت میں پیش نہ ہوا۔

ملزمان پر تھانہ بنی کے علاقے میں لڑکے سے زیادتی کا مقدمہ درج تھا۔سماعت کے دوران عدالت نے کہا کہ ویڈیو دیکھ کر اندازہ ہوا کہ ملزمان انتہائی خطرناک ہے ملزمان کو عبرت کا نشانہ بنانا ہوگا۔سماعت کے دوران عدالت کی جانب سے لڑکی کو بے لباس کرنے کے واقعے میں ملوث ملزمان کی دوسرے مقدمے میں بھی ضمانت قبل از گرفتاری خارج کر دی گئی ہے۔

ضرور پڑھیں   حکومت پاکستان کا میڈیا کورٹس بنانے کا اعلان

گذشتہ روز بنی میں 17 سالہ لڑکی کو بے لباس اور فحش حرکات کی ویڈیو وائرل کرنے والے ملزمان کی عبوری ضمانت خارج کر دی گئی ۔

عبوری ضمانت ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج عبدالقیوم بھٹہ نے خارج کی ۔ملزمان نے عدالت میں پیش ہونے سے گریز کیا اور فرار ہونے کی کوشش کی اور پھر اچانک بھاگ کھڑے ہوئے،پولیس نے تعاقب کرکے ملزمان کو قابو کرلیا ۔ ساتھیوں کو چھڑانے کیلئے اسکے حواریوں کی جانب سے پولیس کے ساتھ مزاحمت کی کوشش کی گئی ،تفتیشی افسر عمران شاہ نے ملزمان کو گرفتار کرکے تھانہ وارث خان منتقل کردیا ۔

ضرور پڑھیں   نوازشریف سیاسی ملاقاتیں نہیں کررہے، مریم اورنگزیب

عدالت نے پولیس کی درخواست پر تعزیرات پاکستان کی دفعہ 354 اے کا اضافہ کرنے کا حکم دیدیا پولیس کے مطابق جرم کی نوعیت ناقابل ضمانت ہے۔ملزمان عبوری ضمانت کے باوجود شامل تفتیش نہیں ہوئے۔ سید پوری گیٹ کی گلی میں ارسلان اور محسن نامی 2لڑکوں نے رات کے وقت مسماة ’’ک‘‘ نامی لڑکی سے سے دست اندازی اور نازیبا حرکات کر رہے تھے جبکہ ایک شخص نے ان لڑکوں کی اس لڑکی کے ساتھ دست درازی کی ویڈیو بنائی وزیر اعلیٰ پنجاب نے میڈیا پر ویڈیو وائرل ہونے کا فوری نوٹس لیتے ہوئے آر پی او راولپنڈی سے رپورٹ طلب کی تھی ۔