چوک الہ آباد میں کروڑوں روپے لاگت سے بنائے جانے والے سروس روڑ پر مقامی دوکانداروں کا قبضہ پیدل گزرنا بھی ناممکن بن گیا

چوک الہ آباد میں کروڑوں روپے لاگت سے بنائے جانے والے سروس روڑ پر مقامی دوکانداروں کا قبضہ پیدل گزرنا بھی ناممکن بن گیا

بیوروچیف الہ آباد قصور رفیق ساجد نوائے جنگ برطانیہ چوک الہ آباد میں کروڑوں روپے لاگت سے بنائے جانے والے سروس روڑ پر مقامی دوکانداروں کا قبضہ پیدل گزرنا بھی ناممکن بن گیا سروس روڑ کو ذاتی ملکیت بنانے والوں کے خلاف آج تک ایکشن نہ لیا ج سکا ۔ سروس روڑ کو جس سہولت کے لئے تعمیر کیا گیا وہ خواب بن گیا ۔ نوٹس لیا جائے ۔ مقامی شہریوں کا حکام بالا سے مطالبہ ۔
تفصیلات کے مطابق الہ آباد قصور دیپالپور روڑ پر کروڑوں روپے کی لاگت سے بنائے جانے والے سروس روڑ ناکا رہ بن کر رہ گیا مقامی دوکانداروں نے اپنی ملکیت بنا لیا شہریوں کا پیدل گزرنا محا بن گیا ایمولینس کئی کئی گھنٹے بھنسی رہتی ھے ٹریفک عملہ غائب شہر سے باہر ناکہ لگا کر دیہاڑی لگانے میں مصروف تھانہ کے محرر سے ساز باز ھو کر موٹر سائیکل وغیرہ تھانہ بند کرواتے ہیں جو رشوت لے کر چھوڑی جاتی ہیں چوک میں جنگلہ لگا کر ٹریفک کو کنٹرول کرنےوالا طریقہ بھی ناکام چوک کا رش میں بے پناہ اضافہ غیرقانونی اڈہ قائم انتظامیہ کے چند افراد قبضہ مافیاء کے ساتھ ساز باز ہیں جس پر سروس روڑ پر قبضہ جمانے والوں کے خلاف آج تک کارروائی نہ ہوسکی دکاندار وں کے خلاف جب بھی کوئی آواز بنتا ہے تو اس کی آواز کو دبا دیا جاتا ہے ۔ کروڑوں روپے لگانے پر راہگیرشہریوں مستفید نہ ہوسکے علاقہ مکینوں کی وزیر اعلیٰ پنجاب اور ڈپٹی کمشنر قصور سے فوری طور نوٹس لینے کی اپیل تاکہ جس مقصد پر یہ سروس روڑ تعمیر کیے گئے اس سے عوام مستفیدھو سکیں ۔اور ٹریفک کا نظام بہتر بنایا جا سکے

اپنا تبصرہ بھیجیں