سابق امریکی صدر پر جوتا پھینکنے والے عراقی صحافی کا الیکشن میں حصہ لینے کا اعلان

بغداد: سابق امریکی صدر جارج بش پر جوتا پھینکنے والے صحافی منتظر الزیدی نے عراق میں ہونے والے انتخابات میں حصہ لینے کا اعلان کردیا۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق سابق امریکی صدر جارج بش پر 2008ء میں اپنے دونوں جوتے اچھالنے والے عراقی صحافی منتظر الزیدی نے عراق میں ہونے والے پارلیمانی انتخابات میں حصہ لینے کا اعلان کردیا ہے۔ عراقی کونسل برائے نمائندگان کے الیکشن رواں ماہ 12 مئی کو ہونے جا رہے ہیں۔

عراقی صحافی منتظر زیدی بش پر جوتے اچھالنے کے بعد دنیا بھر میں شہرت حاصل کرنے میں کامیاب ہوگئے تھے۔ المنتظر الزیدی کی جانب سے الیکشن میں حصہ لینے کے اعلان کے بعد نوجوانوں کی کثیر تعداد نے انتخابی مہم میں عراقی صحافی کی حمایت کا اعلان کردیا ہے۔ سوشل میڈیا پر بھی المنتظر الزیدی کی حمایت میں مہم جاری ہے۔
واضح رہے کہ المنتظر الزیدی نے ایک پریس کانفرنس کے دوران سابق صدر بش پر عراق کے حوالے سے جارحانہ پالیسی پر احتجاجاً اپنے دونوں جوتے یکے بعد دیگرے پھینکے تھے تاہم دونوں جوتے امریکی صدر کو لگ نہیں سکے تھے۔

عراقی صحافی کو اس جرم کی پاداش میں 9 ماہ قید کی سزا بھگتنی پڑی تھی۔ کسی بھی بین الاقوامی سیاسی شخصیت پر جوتا پھینکنے کا یہ پہلا واقعہ تھا جس کے بعد سے سیاست دانوں اور رہنماؤں پر جوتا پھینکنے کا رجحان پیدا ہوگیا اس وقت سے اب تک کئی دیگر بین الاقوامی سیاست دانوں کو جوتوں کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں