ہسپتال میں ریسیپشنسٹ کی نوکری کرنے والی انٹرنیٹ پر یہ فحش کام کر کے ڈیڑھ کروڑ روپے مہینہ کمانے لگی

بیونس آئرس : انٹرنیٹ نے روزگار کے ایسے نئے مواقع فراہم کیے ہیں جن کے متعلق اس ایجاد سے قبل کوئی سوچ بھی نہیں سکتا تھا مگران میں سے کچھ ایسے شرمناک طریقے بھی ہیں کہ ان سے روایتی نوکریاں بھلی۔ اب ارجنٹینا کی اس لڑکی کو دیکھ لیں جو ایک ہسپتال میں استقبالیہ پر نوکری کرتی تھی اور اب انٹرنٹ پر اپنی فحش تصاویر بیچ بیچ کر کروڑوں روپے کما رہی ہے۔ اس 29سالہ لڑکی کا نام لیزا ایریس ہے جوبرطانیہ میں این ایچ ایس میں ملازمت کرتی تھی۔

تین سال قبل اس نے برطانوی ہسپتال کی نوکری چھوڑ کر ویب سائٹ ’اونلی فینز‘ پر اپنا ایک پیج بنایا، جس پر سبسکرائبر پیسوں کے عوض ماڈلز سے اپنی مرضی کی فحش تصاویر بنواتے اور خریدتے ہیں۔ لیزا کاکہنا ہے کہ اب وہ اپنے اس اونلی فینز پیج سے ماہانہ 80ہزار پاﺅنڈ (تقریباً 1کروڑ 65لاکھ روپے) کما رہی ہے۔ لیزا کا کہنا ہے کہ میرے فینز میرے لیے بوائے فرینڈز جیسے ہیں۔ میں انہیں ویسی تصاویر بنا کر بھیجنا پسند کرتی ہوں جیسی وہ چاہتے ہیں۔ آج کوئی یہ یقین نہیں کرتا کہ میں ایک وقت تھا کہ استقبالیہ کی نوکری کرتی تھی مگر یہ حقیقت ہے۔“