وہ شخص جس کی بیوی نے اس کا10 سال تک ریپ کیا

کیف : دنیا بھرمیں گھریلو تشدد کا شکار عموما خواتین بنتی ہیں یا یوں کہہ لیں کہ سب سے زیادہ خواتین پر تشدد کے واقعات سامنے آتے ہیں تاہم دنیا میں کئی مرد بھی ایسے ہیں جنہیں گھریلو تشدد کا نشانہ بنایا جاتا ہے۔

یوکرین سے تعلق رکھنے والے ایسے ہی ایک شخص نے برطانوی نشریاتی ادارے کو اپنی دردناک کہانی سنائی ہے۔ اپنا نام ظاہر کیے بنا اس شخص نے بتایا کہ اس کی اہلیہ نے دس سال تک اسے جنسی ہوس کا نشانہ بنایا۔

اپنی کہانی سناتے ہوؕئے اس شخص نے بتایا کہ “میری زندگی میں پہلی عورت ارا ہی تھی۔ ہم دونوں کی ملاقات اس وقت ہوئی جب ہم 20، 22 برس کے تھے۔ اس نے ہی میری طرف محبت کا پیغام بھیجا تھا۔

متاثرہ شخص کے مطابق میں نے پہلی بار جنسی تعلق ارا کے ساتھ ہی قائم کیا اور میں ایسا کرنا چاہتا تھا۔ لیکن وہ میرے لیے باعث تسکین نہیں تھا بلکہ جارحانہ اور تکلیف دہ تھا۔ جب ہم نے پہلی بار ہم بستری کی تو وہ پانچ گھنٹہ تک جاری رہا اور اس کے ختم ہونے پر میرے پورے جسم میں تکلیف تھی۔

ضرور پڑھیں   جنسی گڑیائیں بنانے والوں سے خریدنے والوں کے انتہائی شرمناک مطالبات سامنے آگئے

سیکس کا مقصد ہوتا ہے تسکین حاصل کرنا لیکن میرے لیے ایسا کبھی نہیں ہوا۔ مجھے کوئی تجربہ بھی نہیں تھا اور مجھے لگا کہ یہ بس ایسے ہی ہوتا ہے تو میں نے بھی منع بھی نہیں کیا۔

لیکن پھر ایک وقت آیا جب میں نے منع کرنا شروع کیا، مگر وہ پھر بھی نہیں رکی۔ یہ وہ موقع تھا جب ہمارا تعلق ریپ میں بدل گیا۔

اس کے بعد آئے روز یہ سب معمول بنتا گیا۔ دن میں کئی کئی بار شدید تھکان اور بخار کے باوجود جنسی عمل پر مجبور کیاجاتا۔ تعلقات کے آخری تین چار سالوں کے بعد سیکس کے خیال سے مجھے خوف کے دورے آنے لگتے۔ یہ اسی وقت ہوتا جب کبھی مجھے پکڑ لیتی اور زبردستی کرنے میں کامیاب ہوجاتی۔

ضرور پڑھیں   کار ریسنگ چھوڑ کر فحش اداکاری کا پیشہ اختیار کرنے والی لڑکی بھارتیوں پر آگ بگولا ہوگئی، انہیں گالیاں نکالنے لگی

خر کار مجھے ایک فیملی تھراپسٹ ملا جس نے میری مدد کی۔ اس دوران مجھے اور ایرا دونوں کو بات کرنے کا موقع دیا جاتا اور اسے مجھے بیچ میں ٹوکنے سے باز رکھا جاتا۔ اسی دوران پہلی بار میں نے زیادتی کی بات کی۔

وہ اس قدر غصے میں تھی کہ وہ چیخ پڑی کہ یہ بالکل جھوٹ ہے۔

بہر حال اس کے فورا بعد اس نے طلاق کی تجویز دی۔ مجھے نہیں لگتا کہ وہ یہ چاہتی تھیں۔ میرا خیال ہے کہ یہ اس کی مجھے خاموش کرنے کی ایک کوشش تھی۔ میں جانتا تھا کہ مجھے دوسرا موقع نہیں ملے گا اور میں راضی ہوگیا۔

ضرور پڑھیں   جو سوتا ہے وہ... امتحان میں اچھے نمبر لیتا ہے!

جب میں نے ایک ماہ بعد طلاق کے کاغذات اٹھائے تو وہ میری زندگی کا سب سے خوشگوار دن تھا۔

طلاق کے ایک دن بعد میں اس پر چیخ پڑا تھا: ‘تم میرا ریپ کر رہی تھی!’

اس نے کہا: ‘میں تمہار ریپ کر رہی تھی تو کیا ہوا؟’

مجھے اس کا جواب اس وقت نہیں ملا اور آج تک نہیں پتا ہے۔

مجھے اتنے طویل عرصے کے بعد اب جا کر احساس ہوا ہے کہ میری سابقہ بیوی نے مجھے دس سال تک ریپ کیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں