توہین عدالت کیس: اسلام آباد ہائیکورٹ نے فردوس عاشق اعوان پر بجلیاں گرادیں

Spread the love

اسلام آباد:اسلام آباد ہائیکورٹ نے فردوس عاشق اعوان کی معافی کی استدعا مسترد کر دی۔ عدالت نے معاون خصوصی برائے اطلاعات کو 11 نومبر تک تحریری جواب جمع کرانے کا حکم دے دیا۔ اسلام آباد ہائیکورٹ میں معاون خصوصی فردوس عاشق اعوان کے خلاف توہین عدالت کیس کی سماعت ہوئی۔

فردوس عاشق نے عدالت سے پھر غیر مشروط معافی کی استدعا کی جسے عدالت نے مسترد کرتے ہوئے 11 نومبر کو دوبارہ طلب کرلیا۔چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ اطہر من اللہ نے کہا ہمارے بارے میں دنیا جو کہتی ہے اس سے اثر نہیں پڑتا، 2014 میں بھی ہمارے خلاف باتیں ہوتی تھیں لیکن وہ دوسری جانب سے ہوتی تھی۔ عدالت نے فردوس عاشق سے استفسار کیا آپ 2014 میں دھرنے میں تھیں، ہائیکورٹ بار کے ایک ممبر نے 2014 میں چھٹی کے روز درخواست دائر کی تھی،

ضرور پڑھیں   وزیر اعظم عمران خان سے افغان صدر اشرف غنی کی ملاقات

جب 2014 میں دفعہ 144 میں گرفتاریاں کی جا رہی تھیں تو اسی عدالت نے روکا تھا۔اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہا اس عدالت نے قانون کے مطابق چلنا ہے اور کسی کو کوئی رعایت نہیں دینی، ہر جج نے اللہ کو حاضر ناظر جان کر حلف لیا ہوتا ہے، سنگین جرم کرنے والے کو بھی شفاف ٹرائل ملنا اس کا حق ہے، چاہے کوئی دہشت گرد ہی کیوں نہ ہو وہ عدالت کے سامنے ملزم ہے۔فردوس عاشق اعوان کے وکیل شاہ خاور ایڈووکیٹ نے عدالت کو بتایا کہ ہم گزشتہ روز جواب جمع نہیں کروا سکے،

جس پر عدالت نے کہا کوئی بات نہیں آپ اب جواب جمع کروا دیں، ہم کیس پھر سماعت کیلئے مقرر کر دیں گے، مجھے لوگ آج کہتے ہیں کہ تمہاری گاڑی کی تصویریں سوشل میڈیا پر چل رہی ہیں۔ میرے ساتھ سپریم کورٹ کے جج بیٹھے تھے اور انہیں ن لیگ کا صدر کہا گیا۔
عدالت نے فردوس عاشق اعوان کی حاضری سے استثنیٰ کی استدعا بھی مسترد کرتے ہوئے 11 نومبر کو دوبارہ طلب کر لیا۔معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات فردوس عاشق نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ معافی کی استدعا مسترد نہیں ہوئی، صرف جواب تحریری جمع کرانے کا کہا گیا، مولانا کے آؤٹ ہونے کا خطرہ ہے،

ضرور پڑھیں   اعظم سواتی کو آرٹیکل 62 ون ایف کے تحت نوٹس کر دیتے ہیں، چیف جسٹس

موسم ،پچ، حالات اور باؤلر دیکھ کر مولانا فیصلہ کریں۔ ایسا عمل نہ کریں جس سے وہ سیاسی گراؤنڈ سے باہر ہو جائیں۔ انہو ں نے کہا مولانا صاحب چاہتے ہیں ہر بال کو چھکا لگا کر گراؤنڈ سے باہر پھینکیں، آؤٹ ہونے کا امکان زیادہ ہے، وزیراعظم قانون کی حکمرانی کی جنگ لڑتے رہے ہیں،

انہوں نے 23 سال سیاسی جدوجہد کی، قانون سے متعلق بل اپوزیشن نے پاس نہیں ہونے دیا۔فردوس عاشق اعوان کا کہنا تھا حکومت ہر شعبے میں بہتری کیلئے اصلاحات لا رہی ہے، پسا طبقہ سب سے پہلے ڈسٹرکٹ بار کے دروازے پر دستک دیتا ہے، سائلین کیلئے سہولتوں کا فقدان مسائل کے حل میں رکاوٹ ہے،

ضرور پڑھیں   حکومت جو سلوک مخالفین سے کررہی ہے کل اس کیلیے تیار رہے، نواز شریف

ڈسٹرکٹ بار کے مسائل وزیراعظم کے نوٹس میں لائی ہوں، وزیراعظم نے متعلقہ وزارتوں کو ہدایات جاری کی ہیں، ضلعی عدالتیں جوڈیشل کمپلیکس میں منتقل ہونی ہیں، عدالت کی شکر گزار ہوں، ضلعی عدالتوں کا جائزہ لینے کا موقع دیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں