ایک آزاد کمیشن مقرر کرنے کا پرزور مطالبہ کیا کہ کمیشن خود مقبوضہ کشمیر جا کر تحقیق کرے کہ بھارتی فورسز انسانی حقوق کی بے انتہاء خلاف ورزیاں کر رہا ہے.نواِئےجنگ برطانیہ رپورٹ

Spread the love

جنیوا(نوائےجنگ رپورٹ)یو این رپورٹ فار ہیو من رائٹس پر ایک انٹرنیشنل کانفرنس جو کہ جنیوا یو این ہیڈکوارٹر میں منعقد ہوئی جس کو (یو این ایچ آر سی) نے منعقد کیا اور اس نے انٹرنیشنل کمیونٹی سے مطالبہ کیا کہ یو این کی رپورٹ پر ایک آزاد کمیشن مقرر کرنے کا پرزور مطالبہ کیا کہ کمیشن خود مقبوضہ کشمیر جا کر تحقیق کرے کہ بھارتی فورسز انسانی حقوق کی بے انتہاء خلاف ورزیاں کر رہا ہے اس کانفرنس کے انعقاد میں انٹرنیشنل ہیومن رائٹس ایوسی ایشن آف امریکن منیرٹی اور انٹرنیشنل مسلم وومن یونین نے بھرپور معاونت کر کے اس کو کامیاب کرانے میں شامل تھی، اس کانفرنس میں انسانی حقوق کی وزیر شیریں مزاری نے بحیثیت مہمان خصوصی شرکت کی۔تقریب سے خطاب کرتے ہوئے بیرسٹر عبدالحمید ترمبو نے کہا کہ یو این کی انسانی حقوق کی رپورٹ ایک بنیاد ہے جو کہ کشمیریوں پر ہونے والے مظالم کو ثابت کرتے ہوئے مہر ثبت کرتی ہے کہ کشمیریوں پر مظالم ہو رہے ہیں اور ان کو رکوانے کیلئے اقدامات کیے جائیں یو این کی اس رپورٹ کو حکومت پاکستان بنیاد بنا کر دنیا بھر اور یو این میں موثر اقدامات کریں۔ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انسانی حقوق کی وزیر شیریں مزاری نے کہا کہ یو این کی رپورٹ یہ ثابت کر چکی ہے کہ بھارت کشمیریوں پر ظلم و ستم کے پہاڑ توڑ رہا ہے اور حکومت پاکستان اور موجودہ حکومت مسئلہ کشمیر پر کشمیریوں کی اخلاقی اور سفارتی امدادی کرتی رہے گی انہوں نے کہا کہ بھارت مقبوضہ کشمیر میں خواتین سے جو غیرانسانی سلوک کر رہا ہے وہ یو این رپورٹ کے ذریعے دنیا کو معلوم ہو چکا ہے انہوں نے کہا کہ عمران خان کی موجودہ حکومت اس مسئلے کا حل چاہتی ہے اور جنگ کسی مسئلے کا حل نہیں ہوتا جبکہ مسائل ٹیبل پر بیٹھ کر حل کیے جا سکتے ہیں۔ شیریں مزاری نے کہا کہ بھارت مسئلہ کشمیر کو یو این میں لے کر گیا تھا اور تب سے یہ مسئلہ حل طلب ہے اور تب سے بھارتی حکمران کشمیریوں پر ظلم و ستم کر رہے ہیں انہوں نے کہا کہ کشمیر کسی بھی صورت میں اٹوٹ انگ نہیں ہے اگر ایسا ہوتا تو ستر سالوں میں یہ جدوجہد جاری نہ ہوتی ۔ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے پروفیسر نذیر احمد شال چیئرمین (SACFPHR) نے کہا کہ کشمیری جو کہ دنیا بھر میں موجود ہیں جو کہ یہ چاہتے ہیں کہ جو مظالم کشمیریوں پر ہو رہے ہیں ان کو روکا جائے انہوں نے کہا کہ یو این کی رپورٹ ہمارے لئے ایک اہم ثبوت اور بنیاد ہے اب بھارت کو اپنا جنگی جنون کو بند کرنا ہو گا انہوں نے کہا کہ 30 سال بعد یہ رٹورپ کشمیریوں کیلئے ایک تازہ ہوا کا جھونکا ہے کانفرنس سے سابق ایم MEP جرمنی مسٹر فرینک شولیا ہوتھ ، مس سوریا بویل، ڈاکٹر عبدالوہاب یو این کمیٹی کے ممبر، برائے ٹارچر مقررین نے کہا کہ بھارت مسئلہ کشمیر سے توجہ ہٹانے کی جو ناکام کوشش کر رہا ہے وہ ہرگز کامیاب نہ ہو گی کیونکہ یو این او نے بھارتی مظالم پر جو رپورٹ دی ہے وہ دنیا کو بتائیں گے۔ آخر میں بیرسٹر عبدالحمید ترانمو اور پروفیسر نذیر احمد شال نے شیریں مزاری کا خصوصی شکریہ ادا کیا کہ موجودہ حکومت اس مسئلے کشمیر کے حل میں دلچسپی لے رہی ہے انہوں نے دنیا بھر سے آئے ہوئے تمام شرکاء کا شکریہ ادا کیا جنہوں نے اس کانفرنس میں شرکت کی ۔ بیرسٹر عبدالمجید ترمبو نے کہا کہ بھارت کا سفارتی سطح پر ہر فورم پر مقابلہ کرینگے جب تک ایک بھی کشمیر زندہ ہے ۔ اور کشمیر اپنا بنیادی حق حق خودارادیت حاصل کریگی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں