بہت سی قوتیں ڈیم کے مقصد کو پورا نہیں ہونے دینا چاہتیں، چیف جسٹس

اسلام آباد: چیف جسٹس پاکستان ثاقب نثار نے ریمارکس میں کہا ہے کہ بڑے دکھ کے ساتھ کہتا ہوں کہ بہت سی قوتیں ڈیم کے مقصد کو پورا نہیں ہونے دینا چاہتیں تاہم ہمیں ایسے معاملات پر اتفاق رائے پیدا کرنا ہے۔

سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں 3 رکنی بنچ نے ادویات کی قیمتوں میں اضافے کے خلاف از خود نوٹس کیس کی سماعت کی، اس موقع پر ایڈیشنل اٹارنی جنرل ساجد الیاس بھٹی نے عدالت کو بتایا کہ فارماسوٹیکل کمپنیوں نے 2013 سے پہلے از خود قیمتیں بڑھائیں، 2015 کی پالیسی کے تحت 2 ہزار کیسز نمٹائے جب کہ ادویات پر بار کوڈ شائع کرنے کے لیے 2 سال کا وقت دیا گیا ہے۔

چیف جسٹس پاکستان نے ریمارکس میں کہا کہ عدالت پالیسی کے معاملے میں مداخلت نہیں کر سکتی، بار کوڈ کی اشاعت کے لیے فارماسوٹیکل انڈسٹری اور دیگر اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ مل کر عمل درآمد کروائیں، دنیا میں بار کوڈ سسٹم رائج ہے، ادویات کی قیمتوں کے کیس کے بعد ہیپاٹائٹس سی اور گردوں کی بیماریوں کے علاج کے لیے کام کریں گے۔
چیف جسٹس پاکستان نے ریمارکس میں کہا کہ فارماسوٹیکل کمپنیوں اور دیگر اسٹیک ہولڈرز کی مدد درکار ہوگی، آپ کو اندازہ ہے کہ گلگت بلتستان میں ہیپاٹائٹس سی کے کتنے مریض ہیں، ہیپاٹائٹس سی کے تدارک کے لائحہ عمل کے لیے سیمینار بھی ارینج کریں گے۔ چیف جسٹس نے ریمارکس میں کہا کہ بڑے دکھ کے ساتھ کہتا ہوں کہ بہت سی قوتیں ڈیم کے مقصد کو پورا نہیں ہونے دینا چاہتیں تاہم ہمیں ایسے معاملات پر اتفاق رائے پیدا کرنا ہے۔

عدالت نے ادویات کی قیمتیں منجمد کرنے اور ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی پاکستان کو ادویات کی قیمتوں سے متعلق کیسز 10 ہفتوں میں نمٹانے کا حکم دیا، عدالت نے حکم میں کہا کہ ڈریپ ادویات پر بار کوڈز شائع کرنے کیلئے فارما سوٹیکل انڈسٹری کے اتفاق رائے سے عمل درآمد کروائے، اس کے علاوہ عدالت نے وفاقی حکومت کو ڈریپ کے مستقل چیف ایگزیکٹو کی تعیناتی کا عمل بھی مکمل کرنے کا حکم دیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں